”نادرا سے اس لڑکی کا پتہ کراﺅں گا کہ۔۔۔“ چیف جسٹس کا بھری عدالت میں ایسا انکشاف کہ ہرصاحب اولاد کے پیروں تلے سے زمین نکل گئی

غیرقانونی ٹیلی فون ایکس چینجزکے معاملے پرازخودنوٹس کی سماعت میں چیف جسٹس ثاقب نثار نے ڈی جی ایف آئی اے کی سربراہی میں تحقیقاتی ٹیم تشکیل دےتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ میرے پاس ایک ویڈیوآئی جس میں لڑکی آئس کانشہ کررہی تھی، لڑکی کے حلیے سے لگ رہاتھاکسی بڑے گھرکی ہے،نادراسے اس بچی کے بارے میں پتہ کراؤں گا ۔میڈیا رپورٹس کے مطابق غیرقانونی ٹیلی فون ایکس چینجزکے معاملے پرازخودنوٹس کی سماعت چیف جسٹس میاں محمد ثاقب نثار کی سربراہی میں بینچ نے سپریم کورٹ آف پاکستان میں کی ۔اس موقع پرڈی جی آئی بی نے موقف اپنایا کہ ملک بھر سے 217 غیرقانونی ٹیلی فون ایکس چینج پکڑے ہیں جس پر چیف جسٹس میاں محمد ثاقب نثارنے ڈی جی ایف آئی اے سے انسدادمنشیات سے متعلق رپورٹ طلب کرتے ہوئے چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ میرے پاس ایک ویڈیوآئی جس میں لڑکی آئس کانشہ کررہی تھی، لڑکی کے حلیے سے لگ رہاتھاکسی بڑے گھرکی ہے،نادراسے اس بچی کے بارے میں پتہ کراؤں گا۔جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ غیرقانونی ٹیلی فون ایکس چینجزکوئی نہیں پکڑرہا جس پر ایف آئی اے نے عدالت کو آگا ہ کیا کہ ساراکام موبائل سمزکے ذریعے ہوا،250 مقدمات درج کیے،3 ہزارملین روپے بچائے ہیں۔چیئرمین پی ٹی اے کاکہنا تھا کہ ہم سمزبندکردیتے ہیں۔سپریم کورٹ نے ڈی جی ایف آئی اے کی سربراہی میں تحقیقاتی ٹیم تشکیل دے دی اور دونوں معاملات پررپورٹ 10 روزمیں طلب کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ ایک ہفتے میں کریک ڈاؤن کرکے رپورٹ دیں،روزانہ بہت بڑانقصان ہورہاہے،اگرنقصان سے بچ جائیں تو پیسے ڈیم فنڈزمیں ڈال دیں گے،آپ لوگ پانی کے حوالے سے غیرسنجیدہ ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here